Dr. Allama Muhammad Iqbal (محمد اقبال‎; 9 November 1877 – 21 April 1938) was a poet, Scholar and politician from Punjab, British India (now in Pakistan), whose poetry in Urdu and Persian is considered to be among the greatest of the modern era, and whose vision of an independent state for the Muslims of British India was to inspire the creation of Pakistan. He is commonly referred to as Allama Iqbal (علامہ اقبال‎).

Ghulami Mein Na Kaam Aati Hain Shamshiren Na Tadbiren,
Jo Ho Zauq-e-yaqin Paida Toh Kat Jaati Hain Zanjiren

غلامی میں نہ کام آتی ہیں شمشیریں نہ تدبیریں

جو ہو ذوق یقیں پیدا تو کٹ جاتی ہیں زنجیریں

Firqa-Bandi Hai Kahin Aur Kahin Zaatein Hain,
Kya Zamane Mein Panapne Ki Yehi Baatein hain

فرقہ بندی ہے کہیں اور کہیں ذاتیں ہیں

کیا زمانے میں پنپنے کی یہی باتیں ہیں

Faqat Nigah Se Hota Hai Faisla Dil Ka,
Faqat Nigah Se Hota Hai Faisla Dil Ka,

فقط نگاہ سے ہوتا ہے فیصلہ دل کا

نہ ہو نگاہ میں شوخی تو دلبری کیا ہے

Aqal Ko Tanqeed Se Fursat Nahi,
Ishq Per Aamal Ki Buniyaad Rakh

عقل کو تنقید سے فرصت نہیں

عشق پر اعمال کی بنیاد رکھ

Amal Se Zindagi Banti Hai Jannat Bhi Jahanum Bhi
Yeh Khaki Apni Fitrat Mein Na Noori Hai Na Naari Hai

عمل سے زندگی بنتی ہے جنت بھی جہنم بھی

یہ خاکی اپنی فطرت میں نہ نوری ہے نہ ناری ہے

Aankh Jo Kuch Dekhti Hai Lab Pe Aa Sakta Nahi,
Mahv-e-Hairat Hun Ke Duniya Kya Se Kya Ho Jayegi

آنکھ جو کچھ دیکھتی ہے لب پہ آ سکتا نہیں

محو حیرت ہوں کہ دنیا کیا سے کیا ہو جائے گی

Sitaron Se Aagey Jahaan Aur Bhi Hain,
Abhi Ishq Ke Imtiha’n Aur Bhi Hain

ستاروں سے آگے جہاں اور بھی ہیں 

ابھی عشق کے امتحاں اور بھی ہیں

Anokhi Waza Hai Saare Zamane Se Nirale Hain,
Yeh Aashiq Konci Basti Ke Ya Rab Rehne Wale Hain

انوکھی وضع ہے سارے زمانے سے نرالے ہیں

یہ عاشق کونسی بستی کے یا رب رہنے والے ہیں